37.1 C
Islamabad
ہفتہ, مئی 18, 2024

ضرور پڑھنا

تبصرے

الرئيسيةجاننے کا حقپی آئی سی نے سیکرٹری ایف بی آر کو ٹیکس نظام ...

پی آئی سی نے سیکرٹری ایف بی آر کو ٹیکس نظام میں شفافیت کے فقدان کی وضاحت کا حکم دے دیا

اسلام آباد : پاکستان انفارمیشن کمیشن (پی آئی سی) نے مطالبہ کیا ہے کہ فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے سیکریٹریا سیاسی طور پر بے نقاب افراد (پی ای پیز) جیسے بی پی ایس-17 سے گریڈ-22 کے سرکاری افسران کی جانب سے ادا کیے جانے والے ٹیکسوں کی حاصل رقم کے بارے میں بتائیں۔ پی آئی سی نے سیکریٹری ایف بی آر سے وضاحت طلب کی ہے کہ ایجنسی فنانس ایکٹ 2022 کے سیکشن 8 (2) (بی)، سیکشن 4 سی (سپر ٹیکس) اور انکم ٹیکس آرڈیننس 2001 کی دفعہ 7 ای (ڈیمڈ انکم پر ٹیکس) کے تحت سی وی ٹی کے تحت ظاہر کی جانے والی معلومات کو ظاہر کرنے سے انکار کیوں کیا گیا۔ یہ معلومات بی پی ایس -17 کی طرف سے بی ایس -22 سرکاری عہدیداروں ، ان کے شریک حیات / بچوں ، یا فائدہ مند مالکان کو کی گئی ٹیکس ادائیگیوں سے متعلق ہے۔

PIC orders PIA to Provide Former Employee With Inquiry Report

 ٹیکس کے وکیل وحید شہزاد بٹ نے ایف بی آر کے خلاف شکایت/اپیل دائر کی تھی، جس میں ایف بی آر پر اہم معلومات چھپانے کا الزام لگایا گیا تھا۔ اس سے ایجنسی کو ہدایت جاری کرنے کی ترغیب ملی۔ درخواست گزار کا کہنا تھا کہ انہوں نے وضاحت کے لیے چیئرمین ایف بی آر سے رابطہ کیا لیکن کوئی جواب نہیں ملا۔

Punjab Assembly ordered to disclose details about MPAs

 اٹارنی بٹ نے اس ڈیٹا کے لیے رائٹ ٹو نو ایکٹ 2017 کے تحت درخواست دائر کی تھی۔ (آر ٹی آئی)۔ وحید شہد بٹ کے مطابق ایف بی آر کی خاموشی اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ آر ٹی آئی قانون کو غیر موثر سمجھا گیا ہے اور ٹیکس حکام ٹیکس کی بنیادی معلومات کو بھی روکنے کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔

 بٹ نے پی ای پی کی جانب سے قومی خزانے میں کی جانے والی کسی بھی سی وی ٹی، سپر ٹیکس یا ڈیمڈ انکم ٹیکس کی ادائیگی کا تفصیلی حساب کتاب طلب کیا ہے۔ ان میں صدر پاکستان، وفاقی وزراء، اعلیٰ ترین اور اعلیٰ ترین اپیلٹ عدالتوں کے ججز، وفاقی اور صوبائی سطح پر اومبڈس مین، چیف الیکشن کمشنر، الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے ارکان، قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین وغیرہ شامل تھے۔

 پی آئی سی کے نوٹس میں کہا گیا ہے کہ ‘پی آئی سی نے مذکورہ اپیل پر غور کرنے کے لیے معمول کی سماعت مقرر کی ہے۔ اب آپ (ایف بی آر عہدیدار) کو حکم دیا گیا ہے کہ وہ کمیشن کے سامنے آئیں یا سماعت کے وقت محکمہ / عوامی ادارے کی نمائندگی کے لئے ایک نمائندہ / پبلک انفارمیشن آفیسر / نامزد افسر بھیجیں تاکہ کمیشن کو قانون کے ذریعہ تفویض کردہ اختیارات پر عمل درآمد کیا جاسکے۔ اگر مدعا علیہ سماعت کے لیے پیش نہیں ہوتا ہے تو فیصلہ یکطرفہ قرار دیا جائے گا اور ذمہ دار فریق کے خلاف ایکٹ کی قابل اطلاق دفعات کے مطابق قانونی کارروائی کی جائے گی۔

ضرور پڑھنا

LEAVE A REPLY

براہ کرم اپنا تبصرہ درج کریں۔
من فضلك ادخل اسمك هنا