30.6 C
Islamabad
ہفتہ, مئی 4, 2024

ضرور پڑھنا

تبصرے

الرئيسيةاسلام آبادسی ڈی اے نے تمام رہائیشی عمارتوں میں بارش کا پانی جمع...

سی ڈی اے نے تمام رہائیشی عمارتوں میں بارش کا پانی جمع کرنے کے لیئے ریچارج کنوؤں کو لازمی کار دے دیا

اسلام آباد : کیپیٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) نے پانی کے انتظام کے ماحول دوست طریقوں کی جانب بڑا قدم اٹھاتے ہوئے تمام رہائشی عمارتوں میں بارش کا پانی جمع کرنے کے مقصد سے ریچارج کنوؤں کی تنصیب کو لازمی قرار دے دیا ہے۔

ماہرین ماحولیات کا مارگلہ ہلز نیشنل پارک کے تحفظ پر تشویش کا اظہار

اس منصوبے پر مکمل عملدرآمد کو یقینی بنانے کے لیے سی ڈی اے کا پختہ عزم ادارے کی جانب سے تجویز کی باضابطہ منظوری میں ظاہر ہوتا ہے۔ مارچ میں ہونے والے بورڈ اجلاس کے دوران ہر ہاؤسنگ یونٹ میں بارش کے پانی کو جمع کرنے کے لیے ریچارج کنوؤں کی تنصیب پر مجبور کرنے کے فیصلے کا تفصیلی جائزہ لیا گیا اور شرکا نے اس فیصلے کو بے حد سراہا۔

ہاؤسنگ سکیموں کا کلین اینڈ گرین اسلام آباد منصوبے میں بڑھ چڑھ کر شرکت

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ زیر زمین پانی کو دوبارہ بھرنے کے لئے ہر گھر کے لئے بارش کے پانی کو جمع کرنے کے اپنے ٹینک وں کے ساتھ ساتھ اپنا چھوٹا کنواں ہونا کتنا ضروری ہے۔

اسلام آباد کا گرینڈ گارڈن: جمہوریت اور ماحولیاتی استحکام کو خراج تحسین

اس کے نتیجے میں ، کوئی تعمیراتی نقشہ قبول نہیں کیا جائے گا اگر اس میں پانی کو دوبارہ بھرنے کے مقصد کے لئے کنواں اور ٹینک دونوں شامل نہ ہوں۔ سی ڈی اے کے واٹر مینجمنٹ ونگ نے اس منصوبے کا آئیڈیا پیش کیا جسے بعد میں سی ڈی اے کے بلڈنگ کنٹرول ڈویژن کے سامنے لایا گیا۔

ریچارج کنوؤں کی تنصیب کے ذریعے، اس کوشش کا بنیادی مقصد زیر زمین پانی کی سطح میں کم از کم چار فٹ کی سالانہ کمی کی شرح سے لڑنا ہے۔ اس اقدام کے پیچھے یہی بنیادی مقصد ہے۔

حقیقت یہ ہے کہ سی ڈی اے پہلے ہی مختلف مقامات پر ستر زیر زمین کنویں نصب کر چکا ہے، جن میں سے کچھ عوامی پارک ہیں۔ ان کنوؤں کو زیر زمین پانی کی سطح کو دوبارہ ذخیرہ کرنے میں کامیاب دکھایا گیا ہے۔

چونکہ اسلام آباد میں پانی کی موجودہ طلب تقریبا 200 ملین گیلن یومیہ (ایم جی / ڈی) تک پہنچ چکی ہے ، پھر بھی سی ڈی اے شہر کے لوگوں کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے صرف 90 ملی گرام / ڈی فراہم کرسکتا ہے ، لہذا پانی کے پائیدار انتظام کی ضرورت اور بھی اہم ہوگئی ہے۔

2017 میں ہونے والی مردم شماری کے نتائج کے مطابق اسلام آباد کی آبادی 20 لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے جو کہ 1998 کے اعداد و شمار سے تقریبا ڈھائی گنا زیادہ ہے۔

ایک عہدیدار کے حوالے سے بتایا گیا کہ رہائشی علاقوں میں ریچارج کنوؤں کی ضروری تنصیب سے نہ صرف زیر زمین پانی کو تبدیل کرنے میں مدد ملے گی بلکہ شہر میں شہری سیلاب پر موثر کنٹرول میں بھی مدد ملے گی۔

ضرور پڑھنا

LEAVE A REPLY

براہ کرم اپنا تبصرہ درج کریں۔
من فضلك ادخل اسمك هنا