35.8 C
Islamabad
جمعہ, مئی 10, 2024

ضرور پڑھنا

تبصرے

الرئيسيةاسلام آبادسی ڈی اے نیلامی اسکینڈل: خریدار کو پلاٹ کی بجائے 50 فٹ...

سی ڈی اے نیلامی اسکینڈل: خریدار کو پلاٹ کی بجائے 50 فٹ گہرا نالہ الاٹ کر دیا

اسلام آباد : کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کی جانب سے حال ہی میں ہونے والی نیلامی میں حصہ لینے اور ایگرو فارم پلاٹ نمبر 37 خریدنے والے ایک شخص نے سی ڈی اے کے چیئرمین نورالامین مینگل کے پاس اس کا ازالہ کرنے کی کوشش کی ہے۔ خریدار کا دعویٰ ہے کہ انہیں دھوکہ دے کر بارش کا نالہ خریدا گیا جو زمین کے حقیقی پلاٹ کے بجائے پچاس فٹ گہرا تھا جس پر انہوں نے بولی لگائی تھی۔ اس سال ہونے والی نیلامی کے دوران اس پلاٹ کو 2 کروڑ روپے کی بولی ملی تھی، لیکن بعد میں اس کا تعین ایک ایسی سائٹ پر کیا گیا تھا جو نیلامی بروشر میں اشتہار دیے گئے علاقے سے کسی بھی طرح سے وابستہ نہیں تھی۔ خریدار کے مطابق پلاٹ کی لوکیشن مبینہ طور پر گوگل میپس کے ذریعے فراہم کی گئی تھی جسے بعد میں غلط ثابت کیا گیا۔  خریدار کا یہ بھی کہنا ہے کہ انہیں جس زمین کو استعمال کرنے کے لیے دیا گیا تھا وہ آٹھ سے دس گھروں سے گھری ہوئی ہے جو دوسرے لوگوں کی ملکیت ہیں، جس کی وجہ سے اس زمین کو اس مقصد کے لیے استعمال کرنا ناقابل عمل ہو جاتا ہے جس کے لیے اس کا ارادہ کیا گیا تھا۔ درخواست گزار کے مطابق سی ڈی اے حکام نے انہیں بتایا کہ انہیں نہر خریدنے کے لیے اضافی 26 کروڑ روپے خرچ کرنے ہوں گے۔ اس کا مطلب یہ ہوگا کہ وہ اپنی ابتدائی ۲ کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کھو دیں گے۔ اس واقعے کی مزید گہرائی سے تحقیقات کے بجائے خریدار کو ایک مختصر خط بھیجا گیا، اس حقیقت کے باوجود کہ بولی لگانے والے نے نیلامی کے ایک دن بعد سی ڈی اے حکام کو ایک ای میل بھیجی تھی، جس میں درخواست کی گئی تھی کہ بولی کی تجویز کو روک دیا جائے۔ عرضی داخل کرنے والے شخص نے اس معاملے کی تحقیقات کرنے کے ساتھ ساتھ ان کے پیسے کی فوری ادائیگی کا مطالبہ کیا ہے۔ انکوائری کمیٹی اعلیٰ سطح پر ہونی چاہیے۔ خریدار اس خیال سے حیران رہ گیا کہ ایک سرکاری ادارہ اتنی بڑی رقم سے ایک نجی شہری کو دھوکہ دے سکتا ہے۔ سی ڈی اے کے حکام نے ابھی تک کوئی جواب نہیں دیا ہے، لہذا یہ معلوم نہیں ہے کہ وہ درخواست گزار کے خدشات کو دور کرنے کے لئے کیا اقدامات کریں گے۔ اس کے باوجود اس نوعیت کے واقعات حکومتی اداروں پر عوام کے اعتماد کو کمزور کرتے ہیں اور حکومتی اداروں کے اندر کھلے پن اور احتساب میں اضافے کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہیں۔

ضرور پڑھنا

LEAVE A REPLY

براہ کرم اپنا تبصرہ درج کریں۔
من فضلك ادخل اسمك هنا