30.6 C
Islamabad
ہفتہ, مئی 4, 2024

ضرور پڑھنا

تبصرے

الرئيسيةاسلام آبادسی ڈی اے کی ایکوائرڈ اراضی پر اسٹامپ پیپر کے لین دین...

سی ڈی اے کی ایکوائرڈ اراضی پر اسٹامپ پیپر کے لین دین پر پابندی

اسلام آباد : کیپیٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی کی جانب سے اسٹامپ پیپرز کے ذریعے خریدی گئی زمین کی خرید و فروخت پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔ پابندی سب اسٹامپ ڈیلرز پر نافض عمل ہو گی۔ شہریوں کی بہت زیادہ شکایات پر یہ پابندی لگائی گئی۔

ضرورت سے زیادہ رقم وصول کرنے پر دمن کوہ کے سی ڈی اے کے منیجر کو معطل کر دیا گیا

اسلام آباد میں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر آف ریونیو نے تمام اسٹامپ تاجروں کو وارننگ لیٹر لکھا ہے جس میں انہیں ہدایت کی گئی ہے کہ وہ فوری طور پر اس طرح کے کاموں کو بند کریں۔ اسلام آباد میں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر آف ریونیو کی جانب سے ہدایات جاری کیے جانے کے بعد یہ مراسلہ جاری کیا گیا۔ اگر وہ ایسا کرنے میں ناکام رہتے ہیں، تو ان کے خلاف قانونی کارروائی کے علاوہ ان کے لائسنس منسوخ کرنے کا خطرہ ہے.

سی ڈی اے نے زون فائیو میں سمنا سمارٹ سٹی اور ساوان فارم ہاؤس کو غیر قانونی ہاؤسنگ سکیمز قرار دے دیا

دارالحکومت کی شہری اتھارٹی نے کئی دہائیوں کے دوران، شہر کی متعدد محصولاتی جاگیروں میں جائیداد کا ایک بڑا پارسل جمع کیا ہے۔ اس زمین کو دیگر چیزوں کے علاوہ رہائشی محلوں کی تعمیر کے لئے استعمال کیا جائے گا۔ تاہم، کئی مقامات پر، مناسب معاوضہ نہیں دیا گیا ہے، اور اتھارٹی کے پاس اس زمین کو مکمل طور پر نہیں رکھا گیا ہے جو اس نے حاصل کی ہے۔

کمیشن کی تقرری میں تاخیر، اسلام آباد کے ماسٹر پلان پر نظرثانی کا عمل روک گیا

ایک بار جب حکومت یہ اعلان کرتی ہے کہ وہ کسی مخصوص علاقے کو حاصل کرے گی، تو تغیرات ، جسے ملکیت میں تبدیلی بھی کہا جاتا ہے ، رک جاتی ہے ، اور زمین صرف منظور شدہ ایجنسی کے ذریعہ فروخت یا خریدی جاسکتی ہے۔

چیئرمین سی ڈی اے کا غیر قانونی مکانات ہٹانے میں ناکامی پر اہلکاروں کے خلاف سخت کارروائی

بدقسمتی سے، پچھلے کچھ سالوں سے، مقامی زمیندار اپنی زمین وں کو اسٹیمپ دستاویزات کے ذریعے فروخت کر رہے ہیں، اور قبضہ دے رہے ہیں، جو شہر کے ارد گرد متعدد غیر قانونی کالونیوں کے قیام کا سبب بن رہے ہیں۔ یہ بستیاں پورے شہر میں پائی جا سکتی ہیں۔ ان اقدامات کے نتیجے میں کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے خلاف عدالت میں تھرڈ پارٹی رائٹس حاصل کیے جاتے ہیں۔

اس وقت مارگلہ ایونیو کے قریب غیر ترقی یافتہ علاقوں میں قبضے کا کافی خطرہ حد تک رجان ہے۔ اگرچہ سی ڈی اے نے کئی سال پہلے ان مقامات پر زمین خریدی تھی لیکن ابھی تک اس نے کوئی تعمیراتی یا ترقیاتی سرگرمی شروع نہیں کی ہے۔ حالیہ دنوں میں سیکٹر سی 16، سی 15، سی 14 اور سی 13 میں تجاوزات کے خلاف آپریشن کیا گیا۔ تاہم سیکٹر ڈی 13، ای 13 اور ایف 13 میں صورتحال کہیں زیادہ سنگین ہے۔ بعض علاقوں میں نجی افراد نے سیکڑوں کنال اراضی پر غیر قانونی طور پر قبضہ کر لیا ہے اور مطلوبہ کاغذی کارروائی کے بغیر شاندار ولاز تعمیر کر لیے ہیں۔ یہ مسئلہ اس لین دین کا براہ راست نتیجہ ہے جو زمین کی خرید و فروخت کے لئے اسٹامپ پیپرز کا استعمال کرتے ہوئے ہوا تھا۔

اس معاملے پر کچھ عرصے کی خاموشی کے بعد شہری اتھارٹی نے اب اسلام آباد کے ڈپٹی کمشنر کو ایک خط جاری کیا ہے، جس میں ان پر زور دیا گیا ہے کہ وہ کارروائی کریں اور اسٹامپ تاجروں کے درمیان تعمیل کو یقینی بنائیں۔

ڈائریکٹر لینڈ سدرہ انور کی جانب سے لکھے گئے خط میں ڈپٹی کمشنر کو بتایا گیا کہ مختلف دیہات اور دیہی علاقوں میں اسٹامپ پیپرز پر سی ڈی اے کی تحویل میں لی گئی زمین کی خرید و فروخت شروع ہوگئی ہے۔ ان میں سے کچھ دیہات اور دیہی علاقوں میں مال پور، علی پور، سنیاری، میرا بیری، پنڈ سنگریال، بھیکر فتح بخش، دھاریک موہری، میرا جعفر اور سنگ جانی شامل ہیں۔ اس طرح کے رویے کی قانون میں ممانعت ہے۔

خط میں اس حقیقت کی جانب بھی توجہ مبذول کرائی گئی ہے کہ ان غیر قانونی قابضین نے سی ڈی اے سے اسٹامپ پیپرز کے بدلے حاصل کی گئی زمین اور تعمیر شدہ اثاثوں سے فائدہ اٹھانے کا دعویٰ کیا ہے۔

خط میں اسٹامپ ڈیلرز کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ سی ڈی اے کی جانب سے حاصل کی گئی زمین کی غیر قانونی فروخت اور حصول کو روکیں اور اس طرح کی کارروائیوں میں حصہ لینے والے اسٹامپ وینڈرز کے خلاف سخت کارروائی کی درخواست کی گئی ہے۔

ضرور پڑھنا

LEAVE A REPLY

براہ کرم اپنا تبصرہ درج کریں۔
من فضلك ادخل اسمك هنا