33.2 C
Islamabad
جمعرات, مئی 16, 2024

ضرور پڑھنا

تبصرے

الرئيسيةاسلام آباداسلام آباد انتظامیہ نے 5 سال بعد ہندو میرج ایکٹ 2017 کے...

اسلام آباد انتظامیہ نے 5 سال بعد ہندو میرج ایکٹ 2017 کے قواعد جاری کردیئے

اقلیتی ارکان اپنی شادیاں مروجہ رسومات کے عین مطابق کر سکیں گے

اسلام آباد : اسلام آباد انتظامیہ نے ہندو میرج ایکٹ 2017 کی منظوری کے پانچ سال بعد اس کے قواعد کا اعلان کیا ہے۔ اس اقدام سے پاکستان میں ہندو اقلیتی برادری کو اپنے مذہبی رسم و رواج کے مطابق شادی کرنے کی اجازت مل گئی ہے۔ اسلام آباد کیپیٹل ٹیریٹری ہندو میرج رولز 2023 کے نام سے جاری نوٹیفکیشن کے تحت پنجاب، خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں بھی میرج ایکٹ کے نفاذ کی اجازت ہوگی۔

عدالت نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی انتظامیہ کی ضمانت قبل از گرفتاری مسترد کردی

 نوٹیفکیشن پر عملدرآمد کے لیے وفاقی علاقے کی تمام یونین کونسلوں کو بھیج دیا گیا ہے۔ قواعد کے مطابق اسلام آباد کی متعلقہ یوسیز شادیوں کی میزبانی کے لیے ‘مہاراج’ کا اندراج کرائیں گی۔ فرد کا ہندو مرد ہونا ضروری ہے جسے ہندو مذہب کا کافی علم ہو، اور مقامی پولیس سے کریکٹر سرٹیفکیٹ اور ہندو برادری کے کم از کم دس ممبروں کی تحریری منظوری لازمی ہے۔

سی ڈی اے کا اسلام آباد میں اشیائے فوڈ سٹریٹ کے کاروبار کیلئے پلاٹوں کی نیلامی کا فیصلہ

یو سی ‘مہاراج’ کو ‘شادی سرٹیفکیٹ’ جاری کریں گے، جسے متعلقہ یوسی میں رجسٹرڈ کیا جائے گا، جیسا کہ مسلمانوں کے لیے ‘رجسٹرڈ نکاح خواں’ کا معاملہ ہے۔ شادی کو یونین کونسلوں میں ریکارڈ کیا جائے گا۔ مقرر کردہ ‘مہاراج’ کو شادی کے انعقاد کے لئے حکومت کی طرف سے مقرر کردہ فیس کے علاوہ کوئی ادائیگی نہیں ملے گی۔ مہاراج کے لائسنس کی موت یا منسوخی کی صورت میں ان کے ذریعہ رکھے گئے شادی کے ریکارڈ کو متعلقہ یو سی میں پیش کیا جائے گا اور ان کے جانشین کو دیا جائے گا۔

قواعد کی دفعہ 7 شادیوں کے خاتمے اور دوبارہ شادی سے متعلق ہے۔ یہ قوانین اسلام آباد میں رہنے والے ہندوؤں کو شادی کے تنازعات کی صورت میں مغربی پاکستان فیملی کورٹس ایکٹ 1964 کے تحت عدالتوں سے رجوع کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔ قوانین کا مسودہ تیار کرنے والے آئی سی ٹی کے ڈسٹرکٹ اٹارنی محفوظ پراچہ نے اس نوٹیفکیشن کو اقلیتی برادری کے حقوق کے تحفظ کی سمت میں ایک اہم قدم قرار دیا۔ پراچہ نے مزید کہا کہ اب صوبے بھی ان قوانین کو اپنا سکتے ہیں۔ اقلیتی حقوق کے گروپ کے لئے قومی لابنگ وفد نے ہندو میرج رولز کی منظوری پر زور دیا۔ گروپ کے ایک رکن جے پرکاش نے اسلام آباد میں مستقل طور پر آباد ہندو برادری کے لئے اس قانون کو نافذ کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔

ضرور پڑھنا

LEAVE A REPLY

براہ کرم اپنا تبصرہ درج کریں۔
من فضلك ادخل اسمك هنا